Rahat fateh ali khan

Rahat Fateh Ali Khan – Khoob Se Khoob Tar

Rahat Fateh Ali Khan Song:

 

Khoob   se   khoob   tar   apna   andaz   mein
Zoq   mein   shoq   mein,   soz   mein   saaz   mein
Hum   hain   sb   sy   alaag   hum   hain   sab   sy   juda
Hai   jo   hum   sa   koi   ae   zamana   deikha

 

Khoob   se   khoob   tar   apna   andaz   mein
Zoq   mein   shoq   mein,   soz   mein   saaz  mein

 

Arzo,   justjo   na   bna   pal   bah   pal
Galke   rashke   jahan   honge   mumtaz   kal
Hum   ne   teh   kar   lia   tha   yeh  awaz  mein
Hum   hain   sb   sy   alaag   hum   hain   sab   sy   juda
Hai   jo   hum   sa   koi   ae   zamana   deikha

 

Khoob   se   khoob   tar   apna   andaz   mein
Zoq   mein   shoq   mein,   soz   mein   saaz   mein
Hum   hain   sb   sy   alaag   hum   hain   sab   sy   juda

 

Kehkshan   ban   ke   apni   bani   raah   guzer
Chand   taroon   ke   phir   hum   rahein   hum   safar
Phir   na   aaei   kami   apni   parwaz   mein
Hum   hain   sb   sy   alaag   hum   hain   sab   sy   juda
Hai   jo   hum   sa   koi   ae   zamana   deikha

 

Khoob   se   khoob   tar   apna   andaz   mein
Zoq   mein   shoq   mein,   soz   mein   saaz   mein
Hum   hain   sb   sy   alaag   hum   hain   sab   sy   juda

 

Ab   nayae   rassta   phir   sajaayain   ge   hum
Ab   nayae   manzilein   phir   se   paaeein   ge   hum
sab   kahein   ge   yhi   ae   phir   awaz   mein
Hum   hain   sb   sy   alaag   hum   hain   sab   sy   juda
Hai   jo   hum   sa   koi   ae   zamana   deikha

 

Khoob   se   khoob   tar   apna   andaz   mein
Zoq   mein   shoq   mein,   soz   mein   saaz   mein
Hum   hain   sb   sy   alaag   hum   hain   sab   sy   juda

 

خوب  سے  خوب  تر  اپنے  انداز  میں

ذوق  میں  شوق  میں، سوز  میں  ساز  میں

ہے  جو  ہم  سا کوئی  اے  زمانے  دیکھا

 

خوب  سے  تر  خوب  اپنے  انداز  میں

ذوق  میں  شوق  میں، سوز  میں  ساز  میں

 

آرزو،  جستجو  نہ  بنا  پل  بہ  پل

گل  کہ  رشکِ  جہاں  ہوں  گے  ممتاز  کل

ہم  نے  طہ  کر  لیا  تھا  یہ  آواز  میں

ہے  جو  ہم  سا کوئی  اے  زمانہ  دیکھا

 

 

خوب سے تر اپنے انداز میں

ذوق میں شوق میں

 سوز میں ساز میں

 

 

کہکشاں بن کے اپنی بنی راہگزر

چاند تاروں کے پھر ہم رہے ہم سفر

پھر نہ آئی کمی اپنی پرواز میں

ہے جو ہم ساکوئی اے زمانے دیکھا

 

خوب سے تر اپنے انداز میں

ذوق میں شوق میں

 سوز میں ساز میں

 

 

اب نئے راستے بھر سجائے گے ہم

اب نئی منزلیں پھر سے پائیں گے ہم

سب کہیں گے یہی اے پھر آواز میں

ہے جو ہم ساکوئی اے زمانے دیکھا

 

 

خوب سے تر اپنے انداز میں

ذوق میں شوق میں

 سوز میں ساز میں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *