Gagar son - umair jaswal

Gagar Song Lyrics – Umar Jaswal

 

Gagar Song Lyircs – Umair Jaswal 

 

 

Pichli   aath   ko   ho   jumme   raat   ko

Teri   gali   se   main   guzra   tha

 

Karrak   dhoop   mein   ho   tera   roop   mein

Mere   dil   ko   yun   jarra    tha

 

Aik   katora   chalkta   kirno   sa   damakta

Tera   haaton   mein   mujhko   ha   yaad

 

Maine   tumhari   gagar   se   kabhi   paani   piya   tha

Tha   pyasa   tha    main

 

Aj   peer   ha  O   dil   cheer   ha

Un   yaadon   mein   atko  ha   jaan   haye

 

Bar   khaab   tha   ho   nadi   aab   tha

Wo   dhoop   tha   aik   toofan

 

Aik   katora   chalkta   kirno   sa   damakta

Tera   haaton   mein   mujhko   ha   yaad

 

Maine   tumhari   gagar   se   kabhi   paani   piya   tha

Tha   pyasa   tha   main

 

Ye   tere   kajal   ka   rang   hua   thaa

Meri   aankhon   ke   sang

 

Gori   tum   wo   din   yaad   karo

Gori   tum   wo   din   yaad   karo

 

 

Ye   tere   kajal   ka   rang   hua   thaa

Meri   aankhon   ke   sang

 

Gori   tum   wo   din   yaad   karo

Gori   tum   wo   din   yaad   karo

 

Maine   tumhari   gagar   se   kabhi   paani   piya   tha

Tha   pyasa   tha   main

 

Pichli   aath   ko   ho   jumme   raat   ko

Teri   gali   se   main   guzra   tha

 

Karrak   dhoop   mein   ho   tera   roop   mein

Mere   dil   ko   yun   jarra   tha

 

Aik   katora   chalkta  kirno  sa  damakta

Tera  haaton  mein  mujhko  ha  yaad

Gagar Urdu Lyrics

 

پچھلی آٹھ کو ہو جمعرات کو

تیری گلی سے میں گزرا تھا

کڑک دھوپ میں ہو تیرے روپ میں

میرے دل کو یوں جکڑا تھا

ایک کٹورا چھلکتا کرنو سا دمکتا

تیرے ہاتھوں میں ہے مجھ کو ہے یاد

میں نے تمہاری گاگر سے پانی پیا تھا

پیاسا تھا میں

آج پیر ہے او دل چیر ہے

ان یادوں میں اٹکی ہے جان ہاۓ

بر آپ تھا ہو ندیا آب تھا

وہ دھوپ تھا ایک طوفان

ایک کٹورا چھلکتا کرنو سا دمکتا

تیرے ہاتھوں میں ہے مجھ کو ہے یاد

میں نے تمہاری گاگر سے پانی پیا تھا

پیاسا تھا میں

یہ تیرے کاجل کا رنگ ہوا تھا

میری آنکھوں کے سنگ

گوری تم وہ دن یاد کرو

گوری تم وہ دن یاد کرو

میں نے تمہاری گاگر سے پانی پیا تھا

پیاسا تھا میں

پچھلی آٹھ کو ہو جمعرات کو

تیری گلی سے میں گزرا تھا

کڑک دھوپ میں ہو تیرے روپ میں

میرے دل کو یوں جکڑا تھا

ایک کٹورا چھلکتا کرنو سا دمکتا

تیرے ہاتھوں میں ہے مجھ کو ہے یاد

میں نے تمہاری گاگر سے پانی پیا تھا

پیاسا تھا میں

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *